ایران بھی سی پیک منصوبے میں شامل ہونے کا خواہشمند

اسلام آباد میں متعین ایرانی سفیر مہدی ہنردوست کہتے ہیں کہ ایران پاکستان کی مسلم ممالک کیساتھ علاقائی تعاون کی کوششوں کا مخالف نہیں، ایران کے بغیر سی پیک شاید آخری مرحلے تک نہ پہنچ سکے، اس لئے ایران چاہتا ہے کہ اپنی تمام تر صلاحیتوں اور توانائیوں کیساتھ سی پیک میں شامل ہوجائے، ہمیں امید ہے کہ پاکستان شراکت داری کیلئے ایران کی طرف بھی دیکھے گا۔

کوئٹہ میں پاک ایران مشترکہ ایوان صنعت و تجارت کے دورے کے موقع پر تاجروں سے خطاب اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان میں ایرانی سفیر مہدی ہنر دوست نے سی پیک میں ایران کی شمولیت کی خواہش کا اظہار کیا، بولے کہ ایرانی شمولیت کے بغیر چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبہ آخری مرحلے تک نہیں پہنچ سکتا۔

اس موقع پر کوئٹہ میں متعین ایرانی قونصل جنرل محمد رفیعی بھی موجود تھے۔ ایرانی سفیر نے پاسداران انقلاب پر خودکش حملے کی مذمت کرتے بولے کہ بدقسمتی سے یہ ایران اور خطے میں دہشتگردی کا پہلا واقعہ نہیں، پاکستانی اور ایرانی حکام دہشتگردی کے مسئلے پر باہمی رابطے میں ہیں کیونکہ دونوں ممالک خطے میں دہشتگردی اور انتہاء پسندی کے خطرے سے دو چار ہیں، بدقسمتی سے دونوں ممالک کو دہشتگردی سے نقصان ہوا ہے، دہشتگردی اب عالمی مسئلہ بن گیا ہے، اس لئے تمام ممالک خاص طور پر متاثرہ ممالک کو اکٹھے ہوکر دہشتگردی کیخلاف باہمی تعاون کو بڑھانا چاہئے۔

ایک سوال پر ایرانی سفیر کا کہنا تھا کہ غربت اور اس جیسے دیگر مسائل کے خاتمے کا ایک بہترین راستہ علاقائی تعاون بھی ہے، ہم دعا گو ہیں کہ خطے کے ممالک کے درمیان تعاون اور روابط بلندیوں کو پہنچیں، پاکستان اور تمام مسلم ممالک کے درمیان تعاون، کاروباری اور تجارتی سرگرمیوں کے فروغ کا سبب بنے گا، ہمیں امید ہے کہ اس سلسلے میں پاکستان ایران کو بھی شراکت دار بنانے پر غور کرے گا کیونکہ ایران بھی علاقائی تعاون کا خواہاں ہے۔

وہ مزید بولے کہ اس وقت ہم دیکھ رہے ہیں کہ مسلم ممالک کے درمیان خلیج بڑھتی جارہی ہے اور انہیں مشکل وقت کا سامنا ہے، اس لئے ہمیں اپنے عذر کو بالائے طاق رکھتے ہوئے مسائل سے نکلنے کیلئے مشترکہ کوششیں کرنی چاہئے، ہم دعا گو ہیں کہ مسلم ممالک، خاص طور پر پاکستان اور ایران کے درمیان مزید تعاون اور اشتراک عمل کو فروغ حاصل ہو۔

ایرانی سفیر نے کہا کہ ایران تجارتی راستوں، اہم وسائل اور بھرپور صلاحیتوں کا حامل خطے کا انتہائی اہم ملک ہے، تہران اپنی تمام تر صلاحیتوں، توانائیوں اور وسائل کے ساتھ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے میں شامل ہونے کا خواہشمند ہے، ایران کے تجارتی راستوں، توانائی کے استعداد اور صلاحیتوں کے بغیر شاید سی پیک فائنل اسٹیپ تک نہ پہنچے، ہم سمجھتے ہیں کہ سی پیک  انتہائی اہم مشترکہ منصوبہ ہے جو خطے کے ممالک کے درمیان تعلقات، یکجہتی اور امن پر اہم اثرات مرتب کرے گا، اس لئے ایران اپنی تمام تر صلاحیتوں کے ساتھ اس منصوبے  کا حصہ بننے کیلئے تیار ہے۔

اس سے قبل پاک ایران مشترکہ ایوان صنعت و تجارت میں تاجروں سے خطاب کرتے ہوئے ایرانی سفیر مہدی ہنردوست کا کہنا تھا کہ امریکی دباؤ اور پابندیوں کا مقابلہ صبر و تحمل اور حکمت عملی کے ذریعے کیا جارہا ہے، پاکستان اور ایران کے درمیان تجارتی اہداف کے حصول کیلئے رکاوٹوں کو دور کرنے کی ضرورت ہے، سرحدی تجارت اور مقامی کرنسی میں لین دین کے ذریعے تجارتی تعلقات کو مضبوط کیا جاسکتا ہے۔

About یاور عباس

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful