حکومت اور متحدہ کے درمیان مذاکرات ناکام ہونے کی وجہ سامنے آ گئی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)حکومت اور متحدہ قومی موومنٹ کے درمیان مذاکرات ناکام ہونے کی وجوہات سامنے آ گئیں ہیں ۔نجی ٹی وی چینل ایکسپریس کے مطابق ایم کیوایم کے وفد نے حکومت کے سامنے دو نئے مطالبے رکھے کہ متحدہ کے قائد الطا ف حسین کی تقریر کی اجازت دی جائے اور کھلالیں اکھٹی کرنے سے پابندی اٹھائی جائے ۔
جس پر حکومتی ٹیم نے متحدہ سے سوال کیا کہ کیا الطاف حسین کی باتیں لوگوں کو سنائی جاسکتی ہیں ؟متحدہ کی ٹیم نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ الطاف حسین نے اداروں کیخلاف باتیں غصے میں کہیں ۔متحدہ نے حکومتی ٹیم کے سامنے دوسرا مطالبہ رکھا کہ کراچی میں کھالیں اکھٹی کرنے پر سے پابندی اٹھائی جائے جس پر حکومتی ٹیم نے جواب دیا کہ کھالیں اکھٹی کرنے پر پابندی قانون نافذ کرنے والے ادارے نے لگائی ہے کیونکہ کھالوں سے آنے والی رقم دہشتگردی میں استعمال ہوتی ہے ۔
واضح رہے کہ گزشتہ رات کے مذاکرات میں متحدہ اور حکومتی وفد سات رکنی شکایات ازالہ کمیٹی پر متفق ہو گئے تھے اور وزیراعظم کی منظوری کے بعد شکایات ازالہ کمیٹی کا اعلان کیاجاناتھا لیکن متحدہ اعلان کے بغیر ہی مذاکرات ختم کر کے چلی گئی ۔

About VOM

Voice of Muslim is committed to provide news of all sort in muslim world.

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful