خیبرپختونخوا، لوڈشیڈنگ کے خلاف دوسرے روز بھی لوگ سراپا احتجاج، کشیدگی کے باعث 1 شخص جاں بحق

پشاور ( نیوز ڈیسک ) صوبہ خیبرپختونخوا کے مختلف علاقوں میں بجلی کی طویل بندش کے خلاف دوسرے روز بھی لوگ سراپا احتجاج ہیں اور مالاکنڈ میں لوڈشیڈنگ کے خلاف مظاہروں کے دوران فائرنگ کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک ہوگیا جبکہ 6 زخمی ہوگئے۔

ملک میں جاری گرمی کی شدید لہر اور طویل لوڈشیڈنگ نے شہریوں کو مشکلات کا شکار کردیا جس کے باعث خیبرپختونخوا کے مختلف شہروں میں لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور احتجاج ریکارڈ کرایا۔ شہریوں نے دوسرے روز بھی واپڈا اور دیگر بجلی فراہم کرنے والے اداروں کے دفاتر پر حملے کیے اور دفاتر پر قبضہ کرکے ان میں توڑ پھوڑ کی۔

ملاکنڈ کے علاقے درگئی میں لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاج کے دوران مظاہرین نے واپڈ ہاؤس پر دھاوا بول دیا اور توڑپھوڑ کی جبکہ مظاہرین نے واپڈا کا دفتر اور تھانے کو نذر آتش کردیا۔ اس دوران پولیس اور مقامی انتظامیہ کی جانب سے مظاہرین کو منتشر کرنے کی کو شش کی گئی تاہم ہوائی فائرنگ سے ایک شخص ہلاک اور 6 افراد زخمی ہوگئے، واقعے کے بعد زخمیوں کو علاج کیلئے مقامی ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ان کی حالت خطرے سے باہر بتائی گئی۔

مظاہرین کے منتشر ہونے کے بعد مقامی سیاسی قیادت، پولیس اور ایف سی کی بھاری نفری متاثرہ مقام پر پہنچ گئی جبکہ صورت حال کو مکمل کنٹرول کرنے کیلئے سیکیورٹی سخت کردی گئی اور مظاہرین سے مذاکرات کا آغاز کردیا گیا۔ واپڈا کے دفتر کو پہنچنے والے نقصان کے حوالے سے بتایا گیا کہ مظاہرین نے دفتر میں موجود کمپیوٹرز کو نقصان پہنچایا جبکہ دفتر کے ریکارڈ کو بھی نقصان پہنچانے کی کوشش کی۔

پشاور میں احتجاج

دوسری جانب اچینی بالا کے مکینوں نے طویل اور غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کے خلاف ایم پی اے فضل الٰہی کی قیادت میں احتجاج کیا۔ ایم پی اے فضل الہیٰ کی قیادت میں مظاہرین نے رنگ روڈ بند کردیا جبکہ واپڈا آفس میں داخل ہونے کی کوشش کی اس دوران ایم پی اے فضل الہیٰ کی حکام سے تلخ کلامی بھی ہوئی۔ بعد ازاں مظاہرین نے ایم پی اے فضل الٰہی کی قیادت میں واپڈا ہاؤس کے اندر دھرنا دے دیا۔

ادھر ترجمان پسکو کے مطابق احتجاج کرکے حالات کو دانستہ خراب کرنے کی کوشش کی گئی، روزانہ کے احتجاج سے ہمارا کام کرنا مشکل ہوگیا ہے۔

خیال رہے کہ دو روز قبل بھی خیبرپختونخوا کے متعدد علاقوں میں احتجاج کے دوران مظاہرین واپڈا سمیت دیگر توانائی فراہم کرنے والے اداروں کے دفاتر میں داخل ہوگئے تھے اور توڑ پھور کی تھی۔
اس کے علاوہ کراچی سمیت سندھ کے دیگر علاقوں میں ماہ رمضان المبارک کی پہلی سحری پر بجلی کے بڑے بریک ڈاؤن نے شہریوں کو پریشان کردیا تھا جبکہ سحرو افطار میں بلاتعطل بجلی کی فراہمی کے حکومتی دعوے دھرے رہ گئے۔

بعد ازاں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کراچی سمیت سندھ کے دیگر اضلاع میں طویل لوڈشیڈنگ کا نوٹس لیتے ہوئے کہا کہ بجلی کی بلا تعطل فراہمی کے باوجود طویل لوڈشینگ کی جارہی ہے۔

About VOM URDU

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful