لاپتا افراد کے لواحقین کاصدر عارف علوی کے گھر کے باہر دھرنا، بتایا جائے بچے کہاں ہیں، لواحقین کا مطالبہ

کراچی :لاپتہ افراد کے لواحقین صدر پاکستان عارف علوی کے گھر کے باہر دھرنا دے کر بیٹھ گئے، ایسٹ زون پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی جبکہ مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے واٹر کینن بھی طلب کرلی گئی ۔

تفصیلات کے مطابق اتوار کو بہادر آباد تھا نے کی حدود میں واقع محمد علی سوسائٹی میں قائم صدر پاکستان کی رہائش گاہ علوی ہاؤس کے باہر لاپتہ افراد کے لواحقین و رشتہ داروں نے دھرنا دیکر احتجا ج شروع کردیا

احتجاج میں خواتین بچے سمیت تین سو سے چارسو افراد شامل تھے جن کے ہاتھوں میں پلے کارڈ بھی موجود ہیں۔ مشتعل افراد کا مطالبہ ہے کہ صدر پاکستان عارف علوی بتائیں کہ دوسے ڈھائی سال اور اس سے بھی زیادہ عرصے سے ہمارے بچے غائب ہیں ،انکے بارے میں بتایا جائے کہ ہمارے بچے کہا ہے زندہ ہے مر چکے ہیں ،اگر ہمارے بچوں پر کوئی مقدمات ہیں یا انکے خلاف کوئی شکایت ہے تو انھیں عدالت میں پیش کیا جائے جب تک انھیں نہیں بتایا جائے گا دھرنا جاری رہے گا

۔اس اطلاع پر پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی اور صورتحال خراب نہ ہونے کے باعث واٹر کینن بھی طلب کرلی گئی ، ایس ایچ او چوہدی شاہد نے رابطہ کرنے پر بتایاکہ مشتعل افراد کو کافی سمجھانے کی کوشش کی گئی لیکن انکا کہنا تھا کہ وہ مذاکرات صرف صدر پاکستان عارف علوی سے کرینگے تاہم صدر پاکستان کراچی میں موجود نہیں ہیں ، انکا کہنا تھا کہ پولیس کی اضافی نفری بھی طلب کر لی گئی ہے

۔دوسری جانب مظاہرین کیجانب سے وزیر اعلیٰ اور گورنر ہاؤس آمد کے خدشے کے پیش نظر وہاں بھی سیکورٹی کو سخت کر دیا گیا ہے۔

About وائس آف مسلم

Voice of Muslim is committed to provide news of all sort in muslim world.

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.