مسئلہ فلسطین کو نظر انداز کیا جانا ریاض اجلاس کیلئے باعث شرم ہے

وائس آف مسلم ( نیوز ڈیسک ) جماعت اسلامی کے سیکریٹری جنرل نے کہا ہے کہ ریاض اجلاس میں مسلمانوں کے اہم ترین مسئلہ فلسطین کو محض امریکی صدر جو علاقے میں صیہونی حکومت کی انسانیت سوز و جارحانہ پالیسیوں کے حامی ہے کو خوش کرنے کیلئے نظر انداز کیا گیا۔

غیر ملکی  نیوز ایجنسی ارنا کے ساتھ انٹرویو میں پاکستان کے ممتاز اہلسنت عالم دین اور جماعت اسلامی کے سیکریٹری جنرل ’’لیاقت بلوچ‘‘ نے کہا کہ ریاض اجلاس سے ہماری کوئی امید وابستہ نہیں تھی اور مذکورہ اجلاس میں عالم اسلام کے اہم ترین مسئلے پر خاموشی ریاض اجلاس کیلئے باعث شرم ہے۔

انہوں نے کہا کہ مذکورہ کانفرنس کےدوران سعودی عرب اور اس کے بعض علاقائی اتحادیوں نے امریکی پالیسیوں کی حمایت کی اور یہ کہنا اس لئے درست ہوگا کہ یہ اجلاس یک ذہن گروہوں کا ایک اجلاس تھا۔

انہوں نے کہا کہ اس اجلاس میں مسئلہ فلسطین کو نظر انداز کرنا پیشگی منصوبہ بندی تھی تاکہ امریکی صدر کو خوش کیا جاسکے۔

موصوف اہلسنت عالم دین نے کہا کہ یہ بات اب پوری طرح واضح ہوچکی ہے کہ مسئلہ فلسطین کو حل کرنے میں امریکہ نے کبھی بھی سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کیا بجائے اس کے واشنگٹن نے ہمیشہ صیہونی حکومت کی توسیع پسندانہ اور ظالمانہ پالیسیوں کی حمایت کی۔

انہوں نے اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ اس اجلاس میں عرب رہنماؤں نے  اسرائیلی جرائم کے خلاف ایک بھی لفظ نہیں بولا کہا کہ عرب سربراہان کے اس طرح کے رویے اور طرز عمل سے ٹرمپ اور دیگر امریکی حکا م خوش تھے لیکن اس اجلاس میں فلسطین پر اس طرح کی خاموشی درست نہیں تھی۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں یہ  بات ذہن نشین کرنے کی ضرورت ہے کہ مغربی طاقتیں کبھی بھی اسلامی دنیا کے مسائل حل کرنے میں مدد نہیں کریں گی اس لئے مسلم ممالک کو مل بیٹھ کر ان مسائل کو حل کرنا ہوگا۔

About VOM URDU

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful