ملی یکجہتی کونسل نے علامہ امین شہید ی پر جھوٹا مقدمہ واپس لینے کا مطالبہ کردیا

ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نےعلامہ امین شہیدی پر بےبنیاد مقدمے کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ بےگناہ لوگوں کو مقدمات میں شامل نہ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ علامہ امین شہیدی نے ہمارے ساتھ ملکر ہمیشہ اتحاد بین المسلمین کے لئے کام کیا ہے، ان کے خلاف بےبنیاد اور جعلی مقدمات قائم کئے جا رہے ہیں، اس موقع پر انہوںنے مزید کہا کہ کرنل (ر) شجاع خانزادہ کے بارے میں انہوں نے کہا کہ وہ اپنے نام کی طرح واقعی ایک شجاع انسان تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم بھارت کی جانب سے لائن آف کنٹرول پر کی گئی جارحیت کی شدید مذمت کرتے ہیں، انہوں نے کہا کہ نیٹو افواج کو جلد از جلد افغانستان کو چھوڑ دینا چاہیے، تاکہ پاکستان اور افغانستان میں دیرپا امن قائم ہوسکے۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کوئی مصلحت گوارا نہیں ہے، لیکن علماء کے خلاف بےبنیاد مقدمات اس تمام تر عمل کو مشکوک کر رہے ہیں۔

اس موقع پر علامہ عارف واحدی نے کہا کہ جنرل حمید گل صاحب کا پاکستان کے لئے انتہائی مثبت کردار تھا، اسی طرح امت مسلمہ کے لئے بھی ان کے درد بھرے جذبات تھے، جس کے لئے وہ ہمیشہ کوشاں رہتے تھے۔ شجاع خانزادہ شہید کے حوالے سے اظہار خیال کرتے ہوئے علامہ عارف واحدی نے کہا کہ کرنل شجاع اسم بامسمٰی تھے۔ انہوں نے کہا کہ توازن کی پالیسی کے نام پر لوگوں کو بےگناہ مقدمات میں پھنسایا جا رہا ہے۔ علامہ امین شہیدی اور دیگر علماء پر بےبنیاد مقدمات بنائے گئے ہیں، جس کی ہم شدید مذمت کرتے ہیں۔ تعزیتی ریفرنس سے پیر عبدالرحیم نقشبندی، میاں اسلم، پیر چراغ الدین شاہ، آصف لقمان قاضی، ثاقب اکبر، حاجی ابو شریف، استاد عبد الباسط مجاہد، طاہر تنولی اور دیگر نے بھی خطاب کیا اور علامہ امین شہید ی پر قتل کے جھوٹے مقدمہ کی شدید مذمت کی۔

About وائس آف مسلم

Voice of Muslim is committed to provide news of all sort in muslim world.

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful