نگر ضمنی الیکشن: پیپلز پارٹی یا اسلامی تحریک…..؟؟ ایم ڈبلیو ایم کا کڑا امتحان

تحریر:کاظم سلیم

مرحوم محمد علی شیخ کی وفات سے خالی ھونے والی نشست پر پیپلز پارٹی اور اسلامی تحریک دونوں ایم ڈبلیوایم سے حمایت حاصل کرنے کاخواھاں ہیں. پیپلزپارٹی نے بڑی کشادہ دلی سے گیند ایم ڈبلیوایم کی کورٹ میں رکھ دی ھے،  پیپلزپارٹی کے امیدوار جناب جاوید حسین نے ایم ڈبلیوایم کے قائدین سے ملاقات میں واضح کیا ھے کہ اس نشست پر اسلامی تحریک کو شکست دینا اس لئے بھی ضروری ھے کہ یہ تنظیم جی بی میں ن لیگ کی بی ٹیم کی حیثیت اختیار کرچکی ھے ! اس لئے ایم ڈبلیو ایم اس نشت ہر ھماری حمایت کرے یا ھم سے حمایت لے!!!

پیپلزپارٹی کے قائدین نے اس حمایت کی ضمن میں آنے والے دنوں میں ایک بڑے اتحاد کا بھی اشارے دیئے ہیں جو جی بی کے ساتھ پورے ملک کی سطح پر دونوں پارٹیوں کے درمیان قابل عمل ھو.
دوسری جانب علامہ سید ساجد علی نقوی کے حکم پر علامہ عارف واحدی نے ایم ڈبلیوایم کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری سے ملاقات کرکے اس نشست پر اسلامی تحریک کی حمایت کی درخواست کی ھے.

میرا ذاتی خیال ھے آنے والے دنوں کو سامنے رکھتے ھوئے پیپلزپارٹی کی حمایت سیاسی نقطہ نگاہ سے ایم ڈبلیوایم کےلئے سود مند رھے گا. لیکن اسلامی تحریک کی حمایت ایک بار پھر ملی شیرازہ بندی کےلئے سنگ میل کی حیثیت رکھتی ھے,اس سے قبل بھی ایم ڈبلیو ایم نے کراچی سولجربازار کی صوبائی اسمبلی کی ضمنی نشست پر اسلامی تحریک کی درخواست پر اپنا امیدوار دستبردار کراکر اچھی ریت ڈالی تھی، اس اچھی اور مثبت روایت کو مزید پنپنے کا موقع ملنا چاھئے، ملی وحدت اور شیرازہ بندی کیلئے ایک سیٹ کی قربانی بھت چھوٹی قربانی ھے، امید ھے دونوں جماعتوں کے قائدین اور فیصلہ ساز ادارے تنظیمی انا اور علاقائی صف بندیوں سے بالائے طاق ھوکر قوم وملت کے مفاد میں مثبت فیصلے کرینگے. ظاہرا اس نشست پر اسلامی تحریک کی حمایت یامخالفت ایم ڈبلیو ایم کےلئے سخت امتحان ھوگا لیکن حمایت کی صورت میں اس کے بعد اصل امتحان اسلامی تحریک کا شروع ھوگا ………!!!

About VOM URDU

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful