آئی جی کا تبادلہ: اعظم سواتی کے مس کنڈکٹ کی تحقیقات کیلئے جے آئی ٹی قائم

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے آئی جی اسلام آباد کو عہدے سے ہٹانے پر لیے گئے از خود نوٹس کی سماعت کی۔

وفاقی وزیر اعظم سواتی اور غریب خاندان کے درمیان جھگڑے کے بعد فون کال نہ اٹھانے پر مبینہ طور پر آئی جی اسلام آباد کو عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا جس کے بعد سپریم کورٹ نے انہیں کام جاری رکھنے کی ہدایت کی تھی۔

عدالت نے وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی اعظم سواتی کے مس کنڈکٹ کی تحقیقات کے لیے سینئر افسران پر مشتمل جے آئی ٹی بنانے کا حکم دیا اور کہا کہ کمیٹی 14 روز میں اپنی رپورٹ پیش کرے۔

چیف جسٹس نے اٹارنی جنرل کو جے آئی ٹی کے لیے آج ہی نام دینے کی ہدایت کی۔

ڈی جی نیب راولپنڈی عرفان منگی کو جے آئی ٹی میں شامل کردیا گیا اور سینئر ہونے کے ناطے وہی جے آئی ٹی کی سربراہی بھی کریں گے، تحقیقاتی ٹیم میں آئی بی کے احمد رضوان اور ایف آئی اے کے میر واعظ نیاز بھی شامل ہیں۔

میرٹ پر تحقیق ہوئی تو ہی پاکستان کے لوگوں کو اداروں پر اعتماد ہوگا، چیف جسٹس

عدالت نے قرار دیا کہ جے آئی ٹی معاملے کی تفصیلی انکوائری کرے گی کہ اعظم سواتی نے بطور وزیر مس کنڈکٹ کیا یا نہیں جب کہ تحقیقاتی ٹیم ان کے اثاثوں کی چھان بین بھی کرے گی۔

عدالت نے کہا کہ جے آئی ٹی تحقیق کرے کہ اعظم سواتی کے خلاف امریکا میں کس نوعیت کے مقدمات ہیں اور پتہ لگائے کہ کیا اعظم سواتی امریکا جاسکتے ہیں یا نہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ یہ فیصلہ کن لمحات ہیں کہ کیا طاقت اور دولت کے ساتھ لوگوں کا استحصال ہوسکتا ہے، میرٹ پر تحقیق ہوئی تو ہی پاکستان کے لوگوں کو اداروں پر اعتماد ہوگا، یہ ملک کی خدمت اور آنے والی نسلوں پر احسان ہوگا۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ غریب آدمی کسی نہ کسی دباؤ میں آجاتا ہے، متاثرہ خاندان نے تو اعظم سواتی کو معاف کر دیا ہے پر ہم نے معاف نہیں کیا۔

آئی جی اسلام آباد جان محمد کی عہدے پر کام کرنے سے معذرت

کیس کی سماعت کے موقع پر فریق وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی اعظم سواتی، متاثرہ خاندان، اٹارنی جنرل انور منصور خان اور آئی جی اسلام آباد جان محمد کمرہ عدالت میں موجود تھے۔

اس موقع پر آئی جی اسلام آباد جان محمد نے اپنے عہدے پر کام جاری رکھنے سے معذرت کرتے ہوئے کہا کہ وہ ان حالات میں کام نہیں کرسکتے اس لیے عدالت سے استدعا ہے تبادلے کے احکامات پر عمل کرنے کی اجازت دی جائے۔

جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ ٹھیک ہے اگر یہ کہہ رہے ہیں تو اجازت ہے، آپ کی مرضی ہے ہم آپ کو منع نہیں کرتے جس کے بعد سپریم کورٹ نے آئی جی کے تبادلے کی معطلی کا حکم واپس لے لیا۔

ہماری صلح ہوگئی، ملک کی عزت خراب نہیں کرسکتا: متاثرہ خاندان کے سربراہ کا عدالت میں بیان

اس موقع پر متاثرہ خاندان کے سربراہ نیاز محمد نے عدالت کو بتایا کہ ہماری صلح ہوگئی ہے، غریب آدمی ہوں، ملک کی عزت خراب نہیں کرسکتا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ اس میں ملک کی عزت کی خرابی کا کوئی معاملہ نہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ خاندان نے بے شک معاف کردیا ہو، یہ اسٹیٹ کے خلاف جرم ہے، معاملے کی انکوائری کروائیں گے، ایسا فعل ایک طاقتور وزیر نے کیا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا ‘جرگے میں ہونے والی صلح صفائی کو نہیں مانتے، وڈا آدمی ہے ، غریباں نوں پکڑوا لیا، مار وی پوائی، جیل وی بھجوایا تے فیر آئی جی وی تبدیل کرا دتا’۔

وفاقی وزیر اعظم سواتی کی طرف سے بیرسٹر علی ظفر عدالت میں پیش ہوئے جن سے مکالمے کے چیف جسٹس نے کہا آپ ہر بڑے بندے کے وکیل بن جاتے ہیں، میں آپ کا لائسنس کینسل کرتا ہوں، بتائیں کتنے عرصے کے لیے لائسنس کینسل کروں۔

بیرسٹر علی ظفر نے مسکراتے ہوئے کہا دو ماہ کے لیے کینسل کردیں جس پر چیف جسٹس نے کہا ہر ناجائز کام کرنے والے کی طرف سے آپ پیش ہوجاتے ہیں۔

اعظم سواتی کو اپنے کیے پر بہت افسوس ہے، وکیل

بیرسٹر علی ظفر نے دلائل دیتے ہوئے کہا اعظم سواتی صاحب کو اپنے کیے پر بہت افسوس ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا اگر انہیں افسوس ہے تو عہدے کو چھوڑ دیں، عہدے کی طاقت سے اعظم سواتی نے یہ کام کیا، غریب خاندان پر ظلم کرنے کے بعد پیسے دےکر صلح کرلی، اب انہیں افسوس بھی ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے ہم معاملے پر ایف آئی اے، نیب اور آئی بی کے افسران پر مشتمل جے آئی ٹی بنائیں گے، اٹارنی جنرل صاحب آج ہی نام دیے جائیں ہم خود افسران منتخب کریں گے۔

بیرسٹر علی ظفر نے دلائل میں کہا اعظم سواتی کی صلح ہوچکی ہے اور اسلامی قوانین کے مطابق ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا اسلامی قوانین اللہ کا تحفہ ہیں، جہاں پر آپ پھنس جاتے ہیں وہاں آپ اسلامی قوانین کو لے آتے ہیں، اسلامی اصول یہ بھی ہے کہ اگر انہیں افسوس ہے تو اپنے عہدے سے استعفی دیں، کسی وزیر کو اس طرح غریب خاندان کو کچلنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

آئی جی آج ہی جھگڑے کے واقعے کی تحقیق کریں اور جو مقدمہ بنتا ہے درج کریں، چیف جسٹس

چیف جسٹس پاکستان نے متاثرہ بچے سے واقعے کی تفصیل سنی اور کہا کہ یہ مس کنڈکٹ کا کیس ہے، عدالتیں کمزور یا ماڑی نہیں ہیں، کیا یہ وزیر اس ملک کے مالک ہیں۔

چیف جسٹس نے کہا کہ ہر کیس میں آئی ایس آئی کو نہیں ڈالنا چاہتا، دیگر متعلقہ اداروں سے انکوائری کرائیں گے۔

چیف جسٹس نے آئی جی اسلام آباد جان محمد کو حکم دیا کہ جھگڑے کے واقعے کی تحقیق کریں اور جو مقدمہ بنتا ہے درج کریں، مجھے یہ آج ہی چاہیے، وزیر کے ساتھ وہی سلوک کریں جو عام آدمی کے ساتھ ہوتا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ اعظم سواتی آپ نے ایک خاندان کی روزی بند کردی، یہ ہے آپ کی دیانت داری، کہتے ہیں تو ابھی 62 ون ایف لگا دیتے ہیں۔

About وائس آف مسلم

Voice of Muslim is committed to provide news of all sort in muslim world.

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful