یوتھ کا ملک بھر میں مظاہرے۔۔۔نواز حکومت کو مشکل میں ڈال دیا۔

اسلام آباد، گلگت ، سکردو، لاہور:یوتھ آف گلگت بلتستان نے اسلام آباد، گلگت، لاہور اور سکردو میں آئینی حقوق کی فراہمی میں غیرمعمولی تاخیر اور اقتصادی راہداری منصوبے میں گلگت بلتستان کو نظرانداز کرنے کی پالیسی کے خلاف احتجاجی مظاہرے کئے ، مظاہرین حق دو ، حق دو ، آئینی حق دو ، حقوق دو ٹیکس لو کے نعرے لگا رہے تھے ، احتجاجی مظاہرے میں پہلی مرتبہ گلگت بلتستان اسمبلی کے پانچ اراکین اور اہم سیاسی شخصیات نے شرکت کی، مظاہرین نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر ائٓینی حقوق کے حق میں نعرے درج تھے ، مظاہرے کئی گھنٹے تک جاری رہے، مظاہرین نے کہا کہ گلگت بلتستان کو منظم سازش کے تحت آئینی حقوق سے محروم رکھا جا رہا ہے ہم پچھلے 68سال سے حقوق سے محروم چلے آئے ہیں مگر وفاق ہمارے حقوق چھیننے کی ہر ممکن کوششں کر رہا ہے اب وقت آ گیا ہے کہ ہمیں آئینی ، بنیادی حقوق دیئے جائیں ورنہ مسائل بڑے سنگین ہو جائیں گے عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا ہے انہوں نے کہا کہ اقتصادی راہداری منصوبہ اس وقت تک نہیں بننے دیں گے جب تک ہمارے علاقے کو آئینی حقوق نہیں دیئے جاتے ، لاہور ، گلگت اور سکردو سمیت ملک کے مختلف حصوں میں ہونیوالے مظاہروں سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ صوبائی حکومت وفاقی حکومت پر آئینی حقوق کی فراہمی کیلئے دباﺅ ڈالے ورنہ معاملہ بگڑ جائیگا۔گلگت بلتستان کے نوجوانوں کا مشترکہ پلیٹ فارم یوتھ اف گلگت بلتستان نے گلگت پرےس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ کےا مظاہرےن کا موقف تھا کہ حقوق دو ٹیکس لو۔ اجتجاجی مظاہرے مےں تمام طلباءتنظیموں نے لےا۔ احتجاجی مظاہر ے کے دوران خطاب کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے رہنما اقبال رسول اور مختلف سماجی، مذہبی اوع سول سوسائئی کے نمائندوں نے کہا کہ وفاقی حکومت اور ریاست پاکستان فی الفور گلگت بلتستان کی طویل محرومیوں کا خاتمہ کرے اور آئین پاکستان میں ترمیم کرتے ہوئے گلگت بلتستان کو پانچواں آئینی صوبہ قرار دے۔ اور گلگت بلتستان میں ٹیکس وصول کرے۔وفاقی حکومت گزشتہ 68سال سے گلگت بلتستان کو نظر انداز کیا ہو اہے۔ وفاقی سینٹ اور قومی اسمبلی میں گلگت بلتستان کو نمائندگی اور این ایف سی ایواڈ میں حصہ نہ دنے کے باوجود گلگت بلتستان کے پسماندہ عوام پر بلاجواز ٹیکسز نافذ کرنا غیر آئینی ہے۔ اور آئینی حقوق نہ ملنے تک تمام ٹیکسز غیر آئینی اور کالعدم ہے۔گلگت بلتستان یوتھ کی کال پر سکردو میں احتجاجی ریلی نکالے گئے احتجاجی ریلی یادگار شہداءسے پریس کلب سکردو تک ریلی نکالی گئی جس میں جوانوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی احتجاجی مظاہرے کے دوران شرکاءنے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈز اٹھائے ہوئے تھے جس پر حق دو ٹیکس لو ،گلگت بلتستان کی تقسیم نامنظور،گلگت سکردو روڈ پر کام جلد شروع کیا جائے اقتصادی راہداری میں گلگت بلتستان کو برابر کا حصہ دیا جائے ، جی بی کو پانچواں آئینی صوبہ بنایا جائے ، گندم کے کوٹے میں اضافہ کی جائے اورغیر آئینی ٹیکس نامنظور کے نعرے درج تھے۔ ادھر لاہور میں پریس کلب کے سامنے یوتھ آف گلگت بلتستان نے بھرپور مظاہرہ کیا ، احتجاجی مظاہرے میں گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔صوبائی اراکین اسمبلی عمران ندیم ، کاچو امتیاز حیدر خان، کیپٹن(ر) محمد شفیق، حاجی رضوان ، پیپلزپارٹی کے سینئر صوبائی نائب صدر جمیل احمد اور تحریک انصاف کی رہنماءآمنہ انصاری ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کو مکمل پانچواں آئینی صوبہ نہ بنایا گیا تو معاملہ سنگین ہو جائے گا اور ملکی مفاد داﺅ پر لگ سکتا ہے۔ قومی پرچم جلانے اور علیحدگی کی تحریکیں چلانے والوں کو حقوق دیئے جا رہے ہیں تو گلگت بلتستان کو آئینی حقوق دینے میں تاخیری حربے کیوں استعمال کیے جا رہے ہیں معاملہ اس وقت بہت حساس ہے۔ آئینی صوبہ بنانے میں معمولی تاخیر کے بڑے نقصانات ہوں گے اسلام آباد میں یوتھ آف گلگت بلتستان کے احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان اسمبلی نے چار سے پانچ مرتبہ خطے کو آئینی صوبہ بنانے کی قراردادیں منظور کیں مگر منظم سازش کے تحت اسمبلی کی قراردادوں کو پس پشت ڈالا جا رہا ہے اسمبلی کی قراردادیں پس پشت ڈالنے کے نتائج بڑے سنگین ہوں گے حقوق کی عدم فراہمی کے باعث عوام میں علیحدگی پسندی کے رجحانات بڑھ رہے ہیں جو ملکی مفاد کیلئے بڑا خطرہ ہے انہوں نے کہا کہ ہماری آخری منزل آئینی صوبہ ہے صوبے سے کم تر کوئی چیز قبول نہیں کی جائے گی۔ گلگت بلتستان کے عوام نے قیام پاکستان اور بقائے پاکستان کیلئے بے شمار قربانیاں دیں مگر منظم منصوبہ بندی کے تحت ہماری قربانیوں کو فراموش کیا جا رہا ہے انہوں نے کہا کہ ہم تنگ آ گئے ہیں حقوق فراہم نہ کئے گئے تو سنگین ردعمل سامنے آئیگا۔ ردعمل حکمرانوں کی توقع سے باہر ہو گا ، انہوں نے کہا کہ 1965، 1971 اور معرکہ کرگل میں ہمارے لوگوں نے پاک فوج کے ساتھ مل کر ملکی دفاع کی جنگ لڑی ، ہمارے ہزاروں فوجی شہید کر دیئے گئے ، نشان حیدر اور دیگر اعلیٰ فوجی اعزازات حاصل کر کے ہم نے ثابت کر دیا کہ ہم پاکستان کے بڑے وفادار ہیں تا ہم کچھ طاقتیں ہماری وفاداری پر شک کر رہی ہیں جو تباہ کن اور شرمناک ہے انہوں نے کہا کہ آئینی صوبہ نہ بنایا گیا تو عوام سڑکوں پر آئیں گے پھر جو بھی صورتحال پیدا ہو گی اس کی تمام تر ذمہ داری حکومت پر عائد ہو گی عوام رفتہ رفتہ حکمرانوں سے مایوس ہوتے جا رہے ہیں جو لوگ حقوق کی راہ میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں وہ ہمارے دشمن ہیں ، ہم دشمنوں کو ہرگز معاف نہیں کریں گے اور ان کا ہر جگہ پر پیچھا کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ آئینی حقوق کمیٹی میں ان لوگوں کو شامل کیا گیا ہے جو گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ بنانے کے سب سے بڑے مخالف ہیں جب تک اس کمیٹی میں حزب اختلاف کی جماعتوں کے لوگ شامل نہیں کیے جاتے ہم کمیٹی کے کسی فیصلے کو قبول نہیں کریں گے آئینی کمیٹی ڈرامہ بازی کر رہی ہے اصل میں کمیٹی خود گلگت بلتستان کو آئینی حقوق کی فراہمی میں خود رکاوٹ ڈال رہی ہے انہوں نے کہا کہ حکومت نے آئینی صوبہ بنانے کی راہ میں رکاوٹ پیدا کرنے کیلئے کشمیری لوگوں کو سامنے لایا ہے۔ کشمیری لوگوں کو ہمارے حقوق کے خلاف استعمال کیا جا رہا ہے ، حکومت کی نیت بہت خراب ہے ہم حکومتی رویئے سے بالکل مایوس ہو چکے ہیں اس لئے اس کو باور کرانا چاہتے ہیں کہ وہ اپنے رویئے کو درست کرے ورنہ مسائل پیچیدہ ہو جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ٹیکس کے ہرگز خلاف نہیں ہیں ٹیکس اس وقت دیں گے جب ہمیں بھی ملک کے دوسرے صوبوں کے برابر حقوق دیئے جائیں گے۔ چاروں صوبوں کے برابر حقوق نہ دیئے گئے تو کوئی ٹیکس نہیں دیں گے۔ جبری ٹیکس لینے کی کوشش کی گئی تو حالات خراب ہو جائیں گے انہوں نے کہا کہ پاک چائنا کوریڈور میں گلگت بلتستان کا کوئی منصوبہ نہیں ہے کئی مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کیے گئے ہیں لیکن ان یادداشتوں میں سے کسی ایک یادداشت پر بھی گلگت بلتستان کا ذکر نہیں ہے جب تک ہمارے ساتھ تحریری معاہدہ نہیں کیا جاتا تب تک ہم اقتصادی راہداری منصوبے کو بننے نہیں د یں گے جب راہداری کا بڑا حصہ گلگت بلتستان کی حدود سے گزر رہا ہے تو ہمارے علاقے کو نظرانداز کرنے کی کیا خاص بات ہے؟ انہوں نے کہا کہ ہم متحد ہو گئے ہیں کسی کو اقتصادی راہداری منصوبے کی آڑ میں ہم اپنے حقوق چھیننے کی اجازت نہیں دیں گے ، وزیراعلیٰ بتائیں کہ راہداری منصوبے سے ہمیں کیا فائدہ ہو گا؟ جب تمام صوبوں کے وزرائے اعلیٰ اپنے اپنے صوبوں کی جنگ لڑ رہے ہیں تو ہمارے وزیراعلیٰ کو پیچھے ہٹنے کی کیا ضرورت ہے ، انہوں نے کہا کہ اقتصادی راہداری منصوبے کو سازش کے تحت چائنہ پنجاب منصوبہ بنایا جا رہا ہے انہوں نے کہا کہ کشمیری اپنی اوقات میں رہیں ورنہ ان کو اپنی حیثیت معلوم ہو جائے گی ہم 68سال سے آئینی حقوق سے محروم چلے آئے ہیں بتایا جائے کہ 68سال سے کشمیری کہاں سوئے ہوئے تھے؟ جب بھی ہمارے حقوق کی بات ہوتی ہے کشمیریوں کے پیٹ میں تکلیف شروع ہو جاتی ہے ۔ کتنی شرم کی بات ہے کہ کشمیر اسمبلی گلگت بلتستان کے آئینی صوبے کے خلاف اجلاس طلب کر چکی ہے ہم حقوق سے ہرگز پیچھے نہیں ہٹیں گے ، انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کی تقسیم کی باتیں وہ لوگ کر رہے ہیں جو ہمارے حقوق کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں تقسیم کی باتیں کرنے والے جان لیں کہ عوام اب متحد ہو گئے ہیں کوئی طاقت انہیں اب حقوق سے محروم نہیں رکھ سکتی حقوق کی راہ میں رکاوٹیں ڈالنے والوں کو بھگایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کے ٹو، سیاچن ، دریائے سندھ کی رائلٹی ہمیں دی جائے اور ہمیں حقوق دیئے جائیں، عوام اپنے حقوق کی حفاظت کیلئے نکل پڑے ہیں حقوق چھیننے والوں کے ہاتھ کاٹ دیئے جائیں گے۔

About وائس آف مسلم

Voice of Muslim is committed to provide news of all sort in muslim world.

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

Read Next

ăn dặm kiểu NhậtResponsive WordPress Themenhà cấp 4 nông thônthời trang trẻ emgiày cao gótshop giày nữdownload wordpress pluginsmẫu biệt thự đẹpepichouseáo sơ mi nữhouse beautiful